Monday, 4 December 2017

Pakistan and its Agricultural Development

In our country (Pakistan), agricultural and industrial development square measure equally necessary. Agriculture is that the basis of economy. By cultivating properly our lands will provide United States food grains like wheat, rice and barley rather more higher than our wants.
First of all our needs of food square measure increasing smartly with an increase in our population per annum. we'd like additional food and with an increase in living standards the individuals get bigger quantities of food. second most of our individuals higher than seventy p.c, earn their living from agriculture and most of our villagers square measure farmers or employees on the farms. third a decent deal of our trade and commerce depend on agriculture. The cotton factories use raw cotton and also the sugar factories square measure overwhelming the sugarcane grownup on farms. Then there square measure many biscuit factories mistreatment flour. The factories manufacturing vegetable clarified butter use completely different styles of oil-seeds. therefore agriculture is that the basis of our trade. fourth commerce and business within the country depends on agriculture. Traders square measure engaged in delivery agricultural product from farms and villages to markets and business centers. The change raw materials mercantilism to the factories is increasing. Fifthly, agriculture is that the basis of our foreign trade. regarding seventy p.c of products exported to alternative countries square measure agricultural raw materials.
In our country agricultural and industrial development square measure equally necessary. Agriculture is that the basis of economy. By cultivating properly our lands will provide United States food grains like wheat, rice and barley rather more higher than our wants.
First of all our needs of food square measure increasing smartly with an increase in our population per annum. we'd like additional food and with an increase in living standards the individuals get bigger quantities of food. second most of our individuals higher than seventy p.c, earn their living from agriculture and most of our villagers square measure farmers or employees on the farms. third a decent deal of our trade and commerce depend on agriculture. The cotton factories use raw cotton and also the sugar factories square measure overwhelming the sugarcane grownup on farms. Then there square measure many biscuit factories mistreatment flour. The factories manufacturing vegetable clarified butter use completely different styles of oil-seeds. therefore agriculture is that the basis of our trade. fourth commerce and business within the country depends on agriculture. Traders square measure engaged in delivery agricultural product from farms and villages to markets and business centers. The change raw materials mercantilism to the factories is increasing. Fifthly, agriculture is that the basis of our foreign trade. regarding seventy p.c of products exported to alternative countries square measure agricultural raw materials.
Our farmers ought to use higher seeds, fertilizers and medicines to kill insects. they must mechanize farming by mistreatment tractors, harvesters, tube-well engines, and power pumps so on the massive scale. we should always try and create our farmers freelance house owners of massive items of land which can create them additional expeditiously. we should always develop well created roads between villages and cities and higher arrangements to bring agricultural manufacture from villages to markets on truck and trains quickly.
We should learn effective techniques of agriculture from the advanced countries so as to modernize it.

Attenuation Widespread Wasteful Irrigation Techniques and Promotion of Usage of Drip and Mechanical Device Systems


To market water usage potency among farmers in geographical areaIBRD has approved extra funding of $130 million.

The purpose of providing this funding is to attenuate widespread wasteful irrigation techniques and promote usage of drip and mechanical device systems.

This $130 million funding from IBRD represents extra funding for the primary section of geographical area Irrigated Agriculture Productivity Improvement Programme (PIAPP), whose original investment stood at $250 million.

PIAPP project may be a theme of the geographical area government termed High-Efficiency Irrigation Systems that envisages to double potency of water usage and encourage private-sector involvement via provide of materials and producing.

Due to decreasing water levels and wastage throughout agriculture production, this theme is being employed to steerfarmers to extend crop yields and move to high-value crops, that embody fruits and vegetables.

The project is geared toward reducing cash paid by farmers for procurements of pesticides and fertilizers, said WB. Country Director magnetic flux unit, Illango Patchamuthu same, “A vivacious farm sector will facilitate finisheconomic condition in Islamic Republic of Pakistan. Our support to the geographical area government can spur new opportunities in climate-smart agriculture that bring more cash for farmers”.

Implementation of this project has seen the installation of drip irrigation systems on regarding twenty six,000 acres of land and provision of five,000 optical maser levelling units has been ensured. WB’s extra funding ought to certify completion of a hundred and twenty,000 acres with ponds in saline areas and guarantee installation of filtration systems for drinkable where possible.

PIAPP project can make sure the improvement of five,550 new water courses, that leaves around ten,300 needing attention.

Wednesday, 22 November 2017

Mango Marketing


Reproduction of Goats





Sunday, 19 November 2017

Climate Changes, Shortage of Food in the world.

موسمیاتی تبدیلیاں، دنیا بھر میں خوراک کی قلت کا خطرہ

کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 نومبر2017ء)سائنسدانوں کے مطابق موسمیاتی تبدیلیوں کے سبب دنیا بھر میں آنے والے سیلابوں، طوفانوں، سطح سمندر میں اضافے اور دیگر آفات کے نتیجے میں قوی امکانات ہے کہ ایسے افراد کی تعداد میں بھی اضافہ ہوگا جنہیں بھوک کا سامنا ہے۔بھوک اور بچوں کے لیے مناسب خوراک کی عدم دستیابی جیسے مسائل میں2050تک20 فیصد اضافے کا امکان ہے۔
یہ انکشاف ورلڈ فوڈ پر پروگرام کی طرف سے جرمن شہر بون میں جاری عالمی مالیاتی کانفرنس کے موقع پر جاری ہونے والی ایک رپورٹ میں کیا گیا ہے۔اس رپورٹ میں اس ضمن میں مختلف خطوں کو درپیش خطرات بیان کیے گئے ہیں۔ شمالی افریقہ میں کسان اور چرواہوں کو اضافی و زیادہ طاقت ور گرمی کی لہروں، پانی کی کمی اور آبادی میں اضافے جیسے مسائل کا سامنا ہے۔اسی طرح اگر جنوبی ایشیائی خطے پر نظر ڈالی جائے تو وہاں کسانوں کی تعداد بہت زیادہ ہے اور انہیں قحط، سیلابی ریلوں، طوفانوں اور طویل المدتی بنیادوں پر غیر ستحکم مون سون بارشوں جیسے مسائل کا سامنا ہے۔

Production of Milk in Pakistan and the 5th No. of Pakistan in milk producer countries

پاکستان ایشیاپیسیفک کے تین بڑے دودھ پیدا کرنے والے ممالک میں جبکہ عالمی سطح پرپانچویں نمبر پر ہے، ڈاکٹرمرتضی مغل

حکومت کے تعاون سے درجہ بندی بہتر ہو سکتی ہے،ڈیری سکیٹر کو توجہ دینے سے کروڑوں افراد کو فائدہ پہنچے گا، صدرپاکستان کانومی واچ

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 نومبر2017ء) پاکستان اکانومی واچ کے صدر ڈاکٹر مرتضیٰ مغل نے کہا ہے کہ پاکستان ایشیاپیسیفک کے تین سب سے زیادہ دودھ پیدا کرنے والے ممالک میں شامل ہے جبکہ عالمی سطح پر دودھ کی پیداوار میں پانچویں نمبر پر ہے۔حکومت کی جانب سے دودھ کی درامد کی حوصلہ شکنی سے مقامی شعبہ ترقی کرے گا جبکہ اس میں ملکی و غیر ملکی سرمایہ کاری بھی بڑھے گی جس سے ایشیاء کی ڈیری مارکیٹ جس کا حجم ایک سو بیس ارب ڈالر ہے میں پاکستان کا حصہ جو اس وقت چھپن کروڑ ٹن ہے مزید بڑھ جائے گا۔
ڈاکٹر مرتضیٰ مغل نے یہاں جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا کہپاکستان میں دودھ دینے والے جانوروں کی کوئی کمی نہیں تاہم گائے اور بھینس سے دودھ کی پیداوار ترقی یافتہ ممالک سے سات سے آٹھ گنا کم ہے۔ جدید طریقے اپنانے سے پاکستان دودھ کی پیداوار میں ساری دنیا پر سبقت حاصل سکتا ہے جس سے بھاری زرمبادلہ کمانے کے علاوہ عوام کی صحت بہتر ہو گی اورمقامی سطح پر دودھ کی قیمت چوتھائی رہ جائے گی جس سے عوام کی صحت اور معیشت پر مثبت اثرات مرتب ہونگے۔
دودھ کے شعبے کی ترقی سے مقامی سطح پر گوشت کی قیمت بھی گر جائے گی، پاکستان حلال پروڈکٹس کی عالمی منڈی میں بھی منفرد مقام بنا لے گا اور چمڑے کی مصنوعات کی صنعت بھی ترقی کرکے بھاری زرمبادلہ کمانے کا سبب بنے گی۔ ڈیری اور لائیوا سٹاک زراعت کا اہم شعبہ ہے جو پالیسی سازوں کی عدم توجہ کے باوجود سالانہ تین سے چار فیصد تک مسلسل ترقی کر رہا ہے جبکہ ترقی کی رفتار میں اضافہ ممکن ہے ۔
ملکی جی ڈی پی میں بارہ فیصد حصہ رکھنے والے اس شعبے میں اس وقت سوا چھ کروڑ جانور ہیں جن کی مدد سے ساڑھے تین کروڑ افراد روزگار کما رہے ہیں۔ دودھ کی پیداوار 50 ارب لیٹر ہے ، اسکی مالیت 180 ارب روپے سے زیادہ ہے جبکہ پیداوار میں سات سے آٹھ فیصد اضافہ ممکن ہے۔ پاکستان سے زندہ جانوروں کی برآمد کے علاوہ چھوٹے اور بڑے کا گوشت سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، کویت، قطر، عمان، افغانستان اور ویتنام برآمد کیا جا رہا ہے جبکہ کھالیں اور لیدر پروڈکٹس یورپ اور امریکہ کو بھی برآمد کی جا رہی ہیں۔ انھوں نے کہا کہ پاکستان میں دودھ اور گوشت کی طلب اور رسد کا توازن خراب ہو رہا ہے جس سے قیمتیں بڑھ رہی ہیں۔

Bann on Indian Basmati Rice

یورپی یونین نے بھارتی باسمتی چاول کو انسانی صحت کیلئے انتہائی خطرناک قرار دے کر اس کی درآمدات پر پابندی عائد کردی.

اگر حکومت کوشش کرے تو یہ سنہری موقع ہے کہ پاکستان ڈھائی لاکھ ٹن اضافی چاول یورپی یونین برآمد کر سکتا ہے، رائس ایکسپورٹر

کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 نومبر2017ء)یورپی یونین نے بھارتی باسمتی چاول کو انسانی صحت کیلئے انتہائی خطرناک قرار دے کر اس کی یکم جنوری سے درآمدات پر مکمل طور پر پابندی عائد کر دی ہے۔یورپی یونین کی اسپیشل ٹیم نے مارکیٹ سے بھارتی چاول کے چند نمونوں کی جانچ پڑتال کی جس کے بعد اس میں مضر صحت کیمیکل کا انکشاف ہوا۔بھارتی باسمتی چاول میں ممنوعہ کیمیکل کی آمیزش فی کلو گرام ایک ملی پائی گئی جبکہ یورپی قوانین میں اس کی حد صرف اعشاریہ 10 فیصد ہونا چاہیے۔
رائس ایکسپوٹرزذرائع نے بتایا کہ آرڈر منسوخ ہونے سے بھارت کو لگ بھگ 26 کروڑ ڈالر کا نقصان ہو گا۔دوسری جانب پاکستانی چاول اپنے معیار اور کوالٹی کے حساب سے یورپی قوانین کے عین مطابق ہیں، اگر حکومت کوشش کرے تو یہ سنہری موقع ہے کہ پاکستان ڈھائی لاکھ ٹن اضافی چاول یورپی یونین برآمد کر سکتا ہے۔